Wednesday, January 19, 2022
spot_imgspot_imgspot_imgspot_img
Homeپاکستاننو مسلم آرزو فاطمہ نے والدین کے گھر جانے کی استدعا کردی

نو مسلم آرزو فاطمہ نے والدین کے گھر جانے کی استدعا کردی

کراچی(این اے نیوز) سندھ ہائیکورٹ نے اسلام قبول کرکے پسند کی شادی کرنے سے متعلق آرزو فاطمہ کی والدین کے گھر جانے کی درخواست پر اسے طلب کرتے ہوئے سندھ حکومت اور دیگر فریقین کو بھی نوٹس جاری کردیئے۔
جسٹس کے کے آغا کی سربراہی میں اسلام قبول کرکے پسند کی شادی کرنے کے کیس کی سماعت ہوئی، نو مسلم لڑکی آرزو فاطمہ نے والدین کے گھر جانے کی استدعا کردی، آروز فاطمہ شلیٹر ہوم کے ذریعے عدالت سے رجوع کرلیا۔
دائر درخواست میں مؤقف اپنایا گیا تھا کہ عدالت نے آروز فاطمہ کو کم عمری میں شادی ثابت ہونے پر 2 نومبر 2020 کو شیلٹر ہوم بھیجا تھا، اب آروز فاطمہ شیلٹر ہوم سے والدین کے ساتھ جانا چاہتی ہے، عدالت نے آج آروز فاطمہ کو طلب کرلیا۔
یہ بھی پڑھیں :نومسلم آرزو فاطمہ کا والدین کے ساتھ جانے سے پھر انکار
جسٹس کے کے آغا نے ریمارکس دیئے ہم آرزو فاطمہ کو سن کر فیصلہ کریں گے، عدالت نے سندھ حکومت اور دیگر فریقین کو بھی نوٹس جاری کردیئے۔
واضح رہے آرزو فاطمہ نے اسلام قبول کرکے علی اظہر نامی شہری سے پسند کی شادی کی تھی، سندھ میں 18 سال سے کم عمر میں شادی کرنا جرم ہے جب کہ آروز فاطمہ نے پہلے اپنے والدین کے ساتھ جانے سے انکار کردیا تھا۔

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -spot_img

Most Popular

Recent Comments