Wednesday, January 19, 2022
spot_imgspot_imgspot_imgspot_img
Homeانٹرنیشنلمیانمار فوج کے ہاتھوں 40 شہریوں کے قتل عام کا انکشاف

میانمار فوج کے ہاتھوں 40 شہریوں کے قتل عام کا انکشاف

میانمار(این اے نیوز)میانمار فوج کی جانب سے رواں برس جولائی میں 4 مختلف واقعات میں 40 سے زائد شہریوں کے قتل عام کا انکشاف ہوا ہے۔
برطانوی نشریاتی ادارے ’بی بی سی‘ کی رپورٹ میں عینی شاہدین اور زندہ بچ جانے والوں کے حوالے سے کہا گیا کہ میانمار کی فوج نے عام شہریوں کو ایک جگہ جمع کیا اور مردوں کو خواتین سے الگ کرکے پہلے تشدد کیا اور اس کے بعد انہیں قتل کردیا۔
مزید پڑھیں:میانمار میں فوج نے مظاہرین پر ٹرک چڑھا دیا، متعدد زخمی
تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق کہ ہلاک کیے جانے والوں میں 17 سال کی عمر کے لڑکے بھی شامل تھے جنہیں قتل کرکے انہیں قبروں میں دفن کردیا گیا۔
رپورٹ میں جائے وقوع سے معتلق بتایا کہ حکومت مخالف تنظیم کا مرکز سمجھے جانے والے ضلع سگائینگ کے کانی ٹاؤن شپ میں 4 مختلف واقعات میں میانمار فوج نے شہریوں کا قتل عام کیا۔
برطانوی نشریاتی ادارے کی رپورٹ کے مطابق سب سے زیادہ قتل عام ین نامی ایک گاؤں میں ہوا جہاں فوج نے 14 افراد کو تشدد کے بعد قتل کیا اور ان کی لاشیں جنگل میں پھینک دیں۔
مزیدپڑھیں: میانمار کی فوجی عدالت نے آنگ سان سوچی کو 4 سال قید کی سزا سنا دی
یہ سمجھا جارہا ہے کہ میانمار فوج کی جانب سے شہریوں کا قتل عام دراصل جمہوریت کی بحالی کے لیے متحارب گروپ کے حملوں کے جواب میں اجتماعی سزا ہے۔
خیال رہے کہ میانمار کی فوج نے رواں برس فروری میں نوبل انعام یافتہ حکمراں آنگ سان سوچی کی جمہوریت حکومت کا تختہ الٹ کر قبضہ کرلیا تھا ۔

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -spot_img

Most Popular

Recent Comments