Monday, January 17, 2022
spot_imgspot_imgspot_imgspot_img
Homeاسلام آبادانکم ٹیکس کلیکشن آن ڈیمانڈ کا حجم 41فیصد سُکڑ گیا

انکم ٹیکس کلیکشن آن ڈیمانڈ کا حجم 41فیصد سُکڑ گیا

اسلام آباد(این اے نیوز) ٹیکس دہندگان کی اپنی کاوشوں سے حاصل ہونیوالے انکم ٹیکس کا حجم رواں مالی سال میں 41 فیصد تک سُکڑ گیا ہے، یہ انکشاف فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے مرتب کردہ اعدادوشمار سے ہوا ہے۔
رواں مالی سال میں یکم جولائی سے لیکر15دسمبر تک مجموعی طور پر710 ارب روپے کا ڈومیسٹک انکم ٹیکس اکٹھا ہوا ہے۔ ایف بی آر کے اعدادوشمار کے مطابق فیلڈ فارمیشنز نے ’ کرنٹ کلیکشن آن ڈیمانڈ‘ کے ذریعے اس مجموعے میں سے محض 12.5 ارب روپے حاصل کیے ہیں۔ اس طرح ملکی سطح پر مجموعی انکم ٹیکس کلیکشن میں ایف بی آر کی فیلڈ فارمیشنز کا حصہ محض 1.8 فیصد ہے۔
ذرائع نے ایکسپریس ٹریبیون کو بتایا کہ 700 ارب روپے کا ریونیو ایڈوانس انکم ٹیکس ( انکم ٹیکس ریٹرنس اور ودہولڈنگ ٹیکسز کے ساتھ ادا کیے جانے والا ٹیکس) کی صورت میں حاصل ہوا ہے۔ گذشتہ مالی سال کی اسی مدت میں انکم ٹیکس کلیکشن آن ڈیمانڈ کا حجم 21.2 ارب روپے تھا، جو رواں مالی سال میں اب تک41 فیصد تک گرچکا ہے۔
ایف بی آر کی فیلڈ فارمیشنز کی یہ ناقص کارکردگی آئی ایم ایف کے اس تخمینے؍ تجزیے کو تقویت بخشتی ہے کہ موجودہ غیرمعمولی طور پر بہتر ٹیکس کلیکشن طویل مدتی بنیادوں پر برقرار نہیں رہ سکتی، اور ٹیکس کلیکشن میں یہ بڑھوتری درآمدی سطح پر ٹیکس ریونیو میں اضافے کی وجہ سے ہے۔
ایف بی آر کے اعدادوشمار کے مطابق ودہولڈنگ ٹیکس، انکم ٹیکس کلیکشن کا سب سے بڑا ذریعہ ہے۔ یعنی وہ ٹیکس جو مختلف ٹرانزیکشنز بشمول تنخواہوں کی ادائیگی، کنٹریکٹس اور ٹیلی فون بلز وغیرہ پر خودکار طور پر کاٹ لیا جاتا ہے۔
رواں مالی سال میں ایف بی آر نے ودہولڈنگ ٹیکسوں کی مد میں 480 ارب روپے حاصل کیے ہیں جو گذشتہ مالی سال کی اسی مدت سے 13 فیصد زائد ہے۔ ملکی سطح پر مجموعی ٹیکس ریونیو میں ودہولڈنگ ٹیکس کا حصہ 68 فیصد ہے۔

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -spot_img

Most Popular

Recent Comments