Thursday, January 27, 2022
spot_imgspot_imgspot_imgspot_img
Homeصحتکورونا ویکسین کی دوسری ڈوز میں تاخیر بہتر ہے، نئی تحقیق

کورونا ویکسین کی دوسری ڈوز میں تاخیر بہتر ہے، نئی تحقیق

ٹورانٹو: کینیڈا میں کی گئی ایک نئی تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ کووِڈ 19 سے بچاؤ کےلیے ایم آر این اے ویکسین کی دوسری ڈوز، مجوزہ مدت کے تین سے چار ہفتوں بعد لگانا زیادہ بہتر رہتا ہے۔یہ اس لیے ہوتا ہے کیونکہ اس اضافی مدت کے دوران جسم میں (پہلی ڈوز لگنے کے بعد) کورونا وائرس کے خلاف پیدا ہونے والی مدافعت (اِمیونیٹی) بتدریج بڑھتی چلی جاتی؛ جس کے بعد دوسری ڈوز لگانے سے یہ مدافعت اور بھی مضبوط ہوجاتی ہے۔یہ تحقیق کینیڈین حکومت کی ’’کووِڈ 19 اِمیونیٹی ٹاسک فورس‘‘ (سی آئی ٹی ایف) کی فنڈنگ سے، یونیورسٹی آف برٹش کولمبیا کے اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر برائن گروناؤ کی سربراہی میں کی گئی ہے۔واضح رہے کہ اس وقت کووِڈ 19 کی دو ایم آر این اے ویکسینز دستیاب ہیں جن میں سے ایک فائزر/ بایو این ٹیک نے جبکہ دوسری موڈرنا نے تیار کی ہے۔دونوں ویکسینز کا مکمل کورس دو خوراکوں (ڈوزز) پر مشتمل ہوتا ہے۔ امریکی ادارے ’’سی ڈی سی‘‘ کے مطابق، فائزر ویکسین کی پہلی خوراک کے 21 دن بعد، جبکہ موڈرنا ویکسین کی پہلی خوراک کے 28 دن بعد دوسری خوراک لگانی چاہیے۔اس کے برعکس، آکسفورڈ اکیڈمک کے ریسرچ جرنل ’’کلینیکل انفیکشس ڈزیز‘‘ کے تازہ شمارے میں شائع شدہ تحقیق میں کینیڈین ماہرین کا کہنا ہے کہ مذکورہ دونوں ویکسینز کی پہلی خوراک کے 42 سے 49 دن (6 سے 7 ہفتے) بعد دوسری خوراک (سیکنڈ ڈوز) لگائی جائے تو وہ زیادہ مؤثر ثابت ہوتی ہے۔یہ تحقیق انہوں نے طبّی عملے کے 186 افراد پر کی ہے جن میں سے دو تہائی نے فائزر کی، جبکہ باقی ایک تہائی نے موڈرنا کی ایم آر این اے ویکسین لگوائی تھی۔ان لوگوں نے تجویز کردہ وقفے (21 اور 28 دن) کے بجائے 42 سے 49 دن بعد ان ویکسینز کی دوسری خوراک لگوائی تھی۔ویکسی نیشن مکمل ہونے کے چند روز بعد جب ان تمام افراد سے خون کے نمونے لے کر تجزیہ کیا گیا تو معلوم ہوا کہ ان میں کورونا وائرس کا خاتمہ کرنے والی اینٹی باڈیز کی مقدار، مجوزہ وقفے کے بعد ویکسین کی دوسری ڈوز لگوانے والوں کے مقابلے میں نمایاں طور پر زیادہ تھی۔

RELATED ARTICLES

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -spot_img

Most Popular

Recent Comments