0

یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی لاہور کے بااثر رجسٹرار کی جعلسازی بے نقاب

لاہور(انویسٹی گیشن سیل)یونیورسٹی انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی لاہور کے وائس چانسلر کے چہیتے رجسٹرار کا نیا کارنامہ بے نقاب،وفات پانےوالے ملازم کے نام پر شاپ کو بغیر ٹینڈر کے بھاری رشوت لیکر اسکے یو ای ٹی میں ملازم بھائی کے نام پر منتقل کردی ،شہری کی درخواست پر تاحال تحقیقات کوئی کارروائی نہ ہوسکی ،متاثرہ شہری کا چیف جسٹس ،نگران وزیراعلیٰ پنجاب ،گورنر پنجاب اور ارباب اختیار سے نوٹس لینے کامطالبہ باوثوق ذرائع کے مطابق یونیورسٹی انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی لاہور میں 2011میں انتظامیہ نے شاپ نمبر7/32یو ای ٹی کے ملازم ظفر کے نام الاٹ کی تو کچھ ہی عرصہ بعد ظفر علی وفات پا گیا تو وائس چانسلر کے لاڈلے بدعنوان رجسٹرار محمد آصف نے 2022 مبینہ طور پر بھاری رشوت لیکر ظفر علی مرحوم کی شاپ نمبری7/32 کو بغیر کسی ٹینڈر کے غیر قانونی طریقے سے اسکے یوای ٹی میں ملازمت کرنےوالے بھائی محمد سلیم کے نام پر منتقل کردی ،شہری نے جب رجسٹرار محمد آصف کے غیر قانونی اقدام کےخلاف وائس چانسلر کو درخواست دی تو وائس چانسلر نے برائے نام انکوائری کمیٹی تشکیل دیدی جسکا آج تک کوئی فیصلہ نہیں ہوسکا ،ذرائع کے مطابق یوای ٹی کے رجسٹرار محمد آصف نے موجودہ وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر حبیب الرحمن سے ملکر اب تک مبینہ طور پر کروڑوں روپے کی کرپشن کرچکا ہے ،آڈیٹر جنرل کی رپورٹ کے مطابق رجسٹرار محمد آصف سے خرد برد کی گئی رقوم کی واپسی کا حکم دیا گیا مگر آج تک یونیورسٹی کی انتظامیہ رجسٹرار سے رقوم واپس نہیں لے سکی ،درخواست دہندہ شہری اور عوامی سماجی حلقوں نے اعلیٰ حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ یونیورسٹی میں شاپ نمبر7/32کا آڈر کینسل کرکے قبضہ واگزار کروایا جائے اور رجسٹرار سے رقم کی وصولی کیا جائے۔جب یونیورسٹی کے ملازم سلیم سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے فون اٹینڈ نہیں کیا ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں