0

پی آئی اے بحالی کیلیے ملازمین نے 100 ارب روپے مانگ لیے

پی آئی اے ملازمین نے بجٹ میں قومی ائیرلائن کیلیے 100 ارب روپے مختص کرنے کا مطالبہ کردیا جب کہ نجکاری کی صورت میں ہڑتال کی دھمکی دے دی۔پی آئی اے سی بی اے پیپلز یونٹی اور دیگرنمائندہ تنظیموں کی جانب سے قومی ائیرلائن کی نجکاری کیخلاف کراچی ائیرپورٹ سے احتجاجی ریلی نکالی گئی،ریلی میں پی آئی اے کی نجکاری اور دو حصوں میں تقسیم کیخلاف نعرے لگائے گئے،ریلی سے پیپلز یونٹی کے صدر ہدایت اللہ خان، ساسا کے جنرل۔سیکریٹری صفدر انجم سمیت دیگر نے خطاب کیا۔ریلی سے خطاب میں رہنماوں نے کہا کہ قومی ائیرلائن کا خسارہ 80 ارب روہے سے بڑھ کر 120 روپے ہوگیا،پیپلز یونٹی آف پی آئی اے کے صدر ہدایت اللہ خان کا کہنا تھا کہ خسارے کو ختم کرنے کے بجائے ائیرلائن کی نجکاری کی جارہی ہے،یہ کسی صورت منظور نہیں ہے،پی آئی اے کی نجکاری روکنے کے لیے ملازمین کا معاشی قتل عام روکنے کے لیے کسی حد تک جانے سے گریز نہیں کرینگے،ائیرلائن کی نجکاری کا بل فوری واپس لیا جائے،ورنہ پی آئی اے کی تمام نمائندہ تنظیمیں 15 اگست کو پریس کانفرنس کے ذریعے آئندہ لائحہ عمل کا اعلان کرینگے۔ساسا کے جنرل سکریٹری صفدر انجم کے مطابق پی آئی اے کا مسلسل بڑھتا خسارہ انتظامیہ کی نااہلی ہے، تجربہ کار انتظامیہ کو لاکرائیرلائن کومنافع بخش بنایا جاسکتا ہے۔پی آئی اے سینئر اسٹاف ایسوسی ایشن ساسا کے صدر عقیل صدیقی کا کہنا تھا کہ پی آئی اے کو بیچنے کے بجائے بجٹ میں ائیرلائن کی بحالی کے لیے 100 ارب روہے مختص کیے جائیں،انتظامی نا اہلی کی سزا ملازمین کے بجائے ذمہ دار افراد کو دی جائے، نجکاری کا بل فوری واپس لیا جائے۔پی آئی اے پیاسی کے صدر نجیب الرحمان کے مطابق پی آئی اے کے ریٹائرڈ ملازمین کی پینشن میں کئی سالوں سے اضافہ نہیں کیا گیا،ان کے اس دیرینہ مطالبے پر سنجیدہ اقدامات کیے جائیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں